Ghulam Shibli

Ghulam Shibli

حجوم دلِ ناتواں کو بہلا سکتا کاش! کہ میں تم کو بھلا سکتا، میں نے میزلیں بھی بدلیں اور راستے بھی۔ فرصتیں بھی اختیار کیں اور مشغلے بھی۔ کاش! اِسکا حل یہ ہوتا، تمھ
Ghulam Shibli